کون سی چشم ہے جاری نہیں جس سے آنسو

ادب حسینی

2016-11-16

3316 مشاہدہ

السلام اے لحد اقدس و اعلائے حسین  ؑ                                          مہبط نور خدا طور تجلائے حسین

 

مرکز دائرہ دیں شرف کون و مکاں                                                 قبلہ  عالمیاں منزل و ماوائے حسین

 

لوح قرآن مبین آئینہ صدق و صفا                                                  ذوالعطا عرش خدا خاک شفاوائے حسین

 

عرش سے آکے ملک ہوتے ہیں مجلس میں شریک                           اے خوشا مرتبہ بزم معلائے حسین

 

یہی بخش کا وسیلہ ہے یہی راہ نجات                                           فرض ہے امت احمد پہ تو لائے حسین

 

کون سی چشم ہے جاری نہیں جس سے آنسو                                کونسا دل ہے کہ جس دل میں نہیں جائے حسین

 

مالک نور تھے دنیا میں صدا مثل علی ؑ                                           پارہ نان و نمک تھا من و سلوائے حسین

 

                                          ہند میں ہوں پہ شب وروز دعا ہے یہ انیس

                                                 قبر ہو متصل قبر معلائے حسین

نئے مواضیع

اکثر شائع

شایدآپ کو بھی پسند آئے