کسی ایک گروہ یا تنظیم کی نہیں بلکہ اہل وطن کی فتح ہے

منبر الجمعة

2017-10-23

278 مشاہدہ

روضہ مبارک امام حسین(ع) کے متولی اور اعلی دینی قیادت کے نمائندے علامہ شیخ عبد المہدی کربلائی  کی اقتداء میں  (29 محرم 1439 ھ) بمطابق (20 اکتوبر 2017) کو نماز جمعہ صحن حرم مقدس حسینی   میں  ادا کی گئی۔

حال ہی میں کرکوک میں حاصل کردہ کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا ، کہ کرکوک میں حاصل کردہ کامیابیاں کو کسی ایک گروہ یا تنظیم کی انفرادی فتح نہیں سمجھنا چاہیے ، بلکہ یہ تمام عراقیوں کی فتح ہے جو کہ اپنے ذاتی اور تنظیمی مفاد سے بالاتر ہوکر اپنے ملک سے وفادار ہیں۔اور اس کامیابی کو ایک نیا نقطہ آغاز سمجھ کر ملکی ترقی کی راہیں ہموار کرنا چاہیں،کہ جس میں ہر ایک کو اپنے ملک اور اس کی خوشحالی کی تعمیر کے لئے مل کر کام کرنا ہو گا۔
جیسا کے ہر ایک کو سیاسی اور سیکورٹی اداروں کی حالیہ پیش رفت اور کرکوک اور دیگر کچھ علاقوں میں فوج اور وفاقی پولیس کی تعیناتی کے بارے میں علم ہے،اور یہاں پر ان جماعتوں کے رویے قابل تعریف ہیں کہ جنہوں نے ہمارے عزیز بھائیوں کے درمیان کسی بھی مسلح جدوجہد سے بچنے کے لیے اس تمام عمل کو پر امن طریقے سے پایا تکمیل تک پہنچایا۔ 
یہ عراق کی تقدیر ہے کہ اس کی پاک سر زمین پر عرب،کرد،ترک اور دیگر دوسری قومیں آپس میں مل جل کر رہیں، لیکن عراقی عوام کے پاس اس وقت تک بہتر مستقبل تعمیر کرنے کا کوئی موقع نہیں ہے جس میں وہ سلامتی، استحکام،اور خوشحالی سے لطف اندوز ہو سکیں،کہ جب تک ، تمام عراقیوں کے حقوق اور فرائض کو انصاف اور مساوات کے اصولوں کے مطابق حالیہ برسوں میں جمع کردہ مسائل کو حل کرنے کے لئے سب کوشش نہ کریں اور ان کے درمیان اعتماد سازی کے رجحانات اور نسلی یا فرقہ وارانہ فسادات کے کنٹرول سے متعلق، اور آئین کو اختیار کرنے کے لئے اعتماد پیدا کرنے کے لئے، جس میں کمی کے باوجود سب سے زیادہ عراقیوں نے ریفرینڈم کو قبول کیا تھا. لہذا اس کے مضامین اور فقرے کا احترام ہونا چاہئے کہ جب تک اس کے لئے فراہم کردہ دستور کے مطابق اس میں ترمیم نہ ہوں۔
ہم سب سے اپیل کرتے ہیں، خاص طور پر سیاسی رہنماؤں اور قائدین سے، کہ آئینی بنیادوں پر قومی ہم آہنگی کو مضبوط بنانے اور عراقی عوام کے درمیان محبت کے رشتوں کو مضبوط کرنے کے لئے ، بغیر کسی استثناء کے مفادات کو یقینی بنانے اور حالیہ واقعات پر مبنی انتقام سے بچنے، عام علاقوں میں کشیدگی کو کم کرنے اور اپنے گھروں میں بے گھر افراد کی واپسی کی سہولیات اور عوامی اور نجی املاک کو تحفظ فراہم کرنے اور ان پر قبضے کی روک تھام کو روکنے،جو بھی کسی بھی مفاہمت کو روکنے کا مطالبہ کرتا ہے یا جو نسل پرستی یا فرقہ پرستی کی ترویج کرتا ہے، چاہے ویڈیو یا آڈیو کلپس شائع ہو یا بینر اٹھائے یا نعرے لگاےٴ، تصویریں یا پرچم جلائے وغیرہ. ہم متعلقہ اداروں پر زور دیتے ہیں کہ وہ ان لوگوں کو سخت سے سخت سزا دیں جو ان غیر اخلاقی کارروائیوں کو انجام دیتے ہیں۔اور اس ملک کے شہریوں اور امن و امان کو نقصان پہنچاتے ہیں۔
ہم وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنی تمام تر توانائیوں کو استعمال کر کے کرد شہریوں کی حفاظت اور دیکھ بھال کو باقی عراقی شہریوں کی طرح یقینی بنائے ،ہم کردش رہنماؤں کو اپنی صفوں کو متحد کرنے اور آئینی بحرانوں پر وفاقی حکومت کے تعاون کے ذریعے موجودہ بحران پر قابو پانے کے لئے مطالبہ کرتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ یہ خدا کی مدد سے سب کے لئے منصفانہ اور باہمی حل ہو گا

نئے مواضیع

اکثر شائع

شایدآپ کو بھی پسند آئے